عامر خان کی فلمیں

Jump to navigation Jump to search
عامر خان
خان برلن فلمی میلے میں ،2011ء

عامر خان ایک بھاتی اداکار، فلم پروڈیوسر، ہدایت کار، پس پردہ گلوکار، منظر نویس اور ٹی وی شخصیت ہیں۔ عامر آٹھ سال کی عمر میں اپنے ماموں ناصر حسین کی فلم یادوں کی بارات(1973ء) میں پہلی دفعہ سامنے آئے۔1983[1] میں انہوں نے پرنویا میں معاون ہدایت کار اور اداکار کے طور پر کام کیا یہ فلم ایک مختصر فلم تھی جس کی ادیتا بھتٹاچریا نے ہدایت کاری کی تھی۔[2] اس کے بعد انہوں نے عامر کی فلم منزل منزل (1984ء) اور زبردست (1985ء) کی ہدایت کاری کرنے میں ان کی مدد کی۔[2][3] بلوغت کی بعد عامر کی پہلی تجرباتی فلم ایک سماجی فلم تھی جس کا نام ہولی تھا جسے 1984ء میں بنایا گیا۔[4]

عامر نے سب سے اہم کردار پہلے پہل مشہور فلم قیامت سے قیامت تک (1988ء) میں جوہی چاولہ کے مقابل میں نبھایا۔۔[5] انکی سنسنی خیز فلم راکھ (1989ء) میں ان کی اداکاری سے انہوں نے 36 ویںنیشنل فلم ایوارڈ میں ایک اہم مقام پایا۔[6] اس کے بعد انہوں نے 1990ء کی ابتدائی سالوں میں کئی کامیاب فلمیں بنائی جن میں رومانٹک ڈراما دل (1990ء) مزاحیہ رومانٹک فلم دل ہے کہ مانتا نہیں (1991ء) اور کھیل سے متعلق فلم جو جیتا وہی سکندر (1992ء) اور مزاحیہ ڈراما ہم ہیں راہی پیار کے (1993ء) اس فلم کی کہانی انہوں نے روبن بھٹ کے ساتھ لکھی تھی۔[7] اس کے اگلے سال انہوں نے میوزیکل ڈراما رنگیلا (1995ء) میں تخلیق کیا۔[8][9] بھارت میں سن 1996ء میں راجا ہندوستانی نے 1996ء میں 80 کروڑ کمائے اس کے بعد انہیں فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار سے نوازا گیا۔[10][11] اس کے بعد 1998ء میں ارتھ فلم میں کام کیا جو کینیڈا اور بھارتی سنیما کی مشترکہ کوشش تھی اور اس کے ڈا ئریکٹر دیپا مہتہ تھے[12]اس کے بعد انہوں نے ایکش ڈراما فلم غلام (1998ء) میں کام کیا جس میں انہوں نے آتی کیا کھنڈالا گا یا تھا۔[13] اور سرفروش (1999ء)[14][15]لیکن اپنی اگلی فلمیں جیسے من (1999ء) اور میلہ (2000ء) میں کوئی خاص کامیاب نا ٹھہرے۔[16]

1999ء میں عامر نے اپنی فلم پروڈکشن کمپنی عامر خان پروڈکشن نے نام سے شروع کی[17] اور اس کے تحت انہوں نے 2001ء میں لگان فلم بنائی اس فلم نے اکیڈمی ایوارڈ کے بہترین غیر ملکی زبان کی فلم کا ایوارڈ جیتا[18] اور انہیں اس پر بہترین مقبول فلم قومی فلم ایوارڈ کی جانب سے دیے گئے اور دو فلم فیئر ایوارڈ بھی انہیں ملے جو بہترین فلم اور بہترین ادکار کے زمرے میں تھے[19]۔[20]2001ء میں ہی انہوں نے سیف علی خان اور اکشے کھنہ کے ساتھ دل چاہتا ہے میں کام کیا ۔[21] میڈیا میں کہا گیا کہ لگان اور دل چاہتا ہے ایسی دو فلمیں ہیں جو ہندی سینما کی نمائندگی کرتے ہیں۔[22][23] 2003 میں عامر روپ کمار راتھوڑکی موسیقی ویڈیو جب بھی چوم لیتا ہوں میں میں نظر آئے۔[24] انہیں نیشنل فلم ایوارڈ 2004ء میں ان کی جانب سے بنائی گئی ڈاکیومنٹری فلم میڈنس ان دا وائلڈ پر دیا گیا[25] جو انہوں نے فلم لگان کی تخلیق سے متعلق بنایا تھا۔ اگلے چار سال تک وہ فلمی دنیا سے غائب رہے پھر انہوں نے فلم دا رائزینگ (2004ء) میں بنائی اس فلم نے اتنی کامیابی حاصل نہیں کی[26][27] اسی سے انہوں نے منگل پانڈے کا نام کمایا۔ 2006ء میں انہوں نے فنا اور رنگ دے بسنتی میں اہم کردار ادا کیا[28] اس پر انہیں مؤخر الذکر فلم میں بہترین اداکار کے زمرے میں فلم فیئر ایوارڈ سے نوازا گیا۔[29] اس کے اگلے سال انہوں نے تارے زمیں پر تخلیق کیا جس میں درشیل سفاری کے ہمرہ انہوں نے معاون کردار کیا[17][30]اس پر انہیں خوب داد ملی اور انہوں نے نیشنل فلم ایوارڈ جیتا جو بہترین فلم برائے بہبود خاندان اور فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین فلم اور بہترین ڈائیرکشن جیتا۔[31][32]

خان نے گجنی 2008ء میں ایک ایسے شخص کا کردار ادا کیا جو ایک حادثے میں اپنا یاداشت کھو بیٹھا ہے۔۔[33][34] اس کے بعد وہ کامیڈی ڈراما تھری ایڈیٹس (2009ء) میں نظر آئے[35] جبکہ دھوبی گھاٹ (2010ء) میں انھوں ایک سائڈ کردار کیا [36] جسے انہوں نے ہی پروڈیوس کیا تھا۔ وہ اپنے اگلی فلموں پیپلی لائیو (2010ء) اور دہلی بیلی (2011ء) میں پروڈیوسر رہے۔[37] 2012 میں خان نے ایک ٹی وی ٹاک شو ستیامیو جیاتی میں کام کیا۔[38] اسی سال انہوں نے ایک فلم تلاش میں ایک پولیس انسپکٹر کا کردار نبھایا اسی دوران میں وہ ڈراما سی آئی ڈی میں بھی شریک رہے[39]2013ء میں وہ ابھیشیک بچن اور ادے چوپڑا کے ہمراہ دھوم تھری میں رہے[40]2014ء میں وہ پھر چھوٹی سکرین پر آئے تاکہ اپنے پروگرام ستیامیو جیاتی کے دوسرے اور تیسرے حصے پر کام کرسکیں۔[41][42] اس کے بعد وہ 7 ₹ ارب روپے کمانی والی فلم پی کے میں بطور خلائی مخلوق سامنے آئے۔۔[43][44] عامر کی چار فلمیں گجنی، 3 ایڈیٹس ،دھوم 3 اور پی کے بالی وڈ کے سب سے زیادہ کاروبار کرنے والی فلموں میں سے ایک ہیں۔[45]

فلم

کلید
Films that have not yet been released اس سے مراد وہ فلم ہے جو اب تک سینما میں نہیں آئیں۔
فلم سال بطور تخصیص حوالہ۔
اداکار پروڈیوسر دیگر کردار
یادوں کی بارات 1973 ہاں ینگ رتن[II] مختصر کردار [46]
مدہوش 1974 ہاں ینگ راج[III] مختصر کردار [46]
پرانویا 1983 ہاں معاون ڈائیریکٹر نامعلوم مختصر فلم [47]
[48]
منزل منزل 1984 معاون ڈائیریکٹر [3]
ہولی 1984 ہاں مدن شرما [47]
زبردست 1985 معاون ڈائیریکٹر [3]
قیامت سے قیامت تک 1988 ہاں معاون مصنف راج نیشنل فلم ایوارڈ اینڈ ان بی ایس پی;– خصوصی تذکرہ (یہ انعام راکھ کے لیے بھی تھی)
فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین نئے مرد اداکار
نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار
[49]
[50]
[51]
راکھ 1989 ہاں عامر حسین نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[52]
لو لو لو 1989 ہاں امیت [53]
اول نمبر 1990 ہاں سنی [53]
تم میرے ہو 1990 ہاں شیوا [53]
دل (فلم) 1990 ہاں راجا نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[54]
[55]
دیوانہ مجھ سا نہیں 1990 ہاں اجے شرما [53]
جوانی زندہ باد 1990 ہاں ساشی شرما [53]
افسانہ پیار کا 1991 ہاں راج [56]
دل ہے کہ مانتا نہیں 1991 ہاں راگھو جیٹلی نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[57]
اسی کا نام زندگی 1992 ہاں چھوٹو [58]
دولت کی جنگ 1992 ہاں راجیش چودھری [59]
جو جیتا وہی سکندر 1992 ہاں سنجے لال شرما نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[60]
پہلا نشہ 1993 ہاں بذات خود مختصر کردار [61]
پرمپرا 1993 ہاں رنبیر پرتھوئی سنگھ [62]
دمنی اینڈاین بی ایس پی;– لائٹنگ 1993 ہاں بذات خود مختصر کردار [63]
ہم ہیں راہی پیار کے 1993 ہاں فلم نویس راہول ملہوترا نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [7]
[50]
انداز اپنا اپنا 1994 ہاں عمار منوہر نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [64]
[65]
بازی 1995 ہاں عمار دامجی [66]
آتنک ہی آتنک 1995 ہاں روہن [67]
رنگیلا 1995 ہاں منا [68]
اکیلے ہم اکیلے تم 1995 ہاں روہت کمار نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[69]
راجا ہندوستانی 1996 ہاں راجا ہندوستانی فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [11]
[50]
عشق 1997 ہاں راجا [70]
غلام 1998 ہاں پس پردہ گلوکار سد ہارتھ مراٹھی نامزد—راجا ہندوستانی
نامزد—فلم فیئر یاوارڈ برائے بہترین مرد پس پردہ گلوکار
[50]
[71]
ارتھ 1998 ہاں دلنواز کینیڈین-بھارتی فلم
بھارت میں نشر ہوئی بمطابق1947: Earth
[72]
سرفروش 1999 ہاں اجے سنگھ راتھوڑ نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[73]
من 1999 ہاں دیو کرن سنگھ [74]
میلہ 2000 ہاں پس پردہ گلوکار کشن پیارے [75]
لگان (فلم) 2001 ہاں ہاں بھون [[نیشنل فلم ایوارڈ فار بیسٹ پاپولر فلم پوائڈینگ ہولسم اینٹرٹینمنٹ/> فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین فلم
فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار
نامزد—اکیڈمی ایوارڈ برائے بہترین غیر ملکی فلم
[19]
[18]
[50]
دل چاہتا ہے 2001 ہاں آکاش ملہوترا نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[76]
میڈنس ان دا ڈیزرٹ 2004 ہاں ہاں بزات خود ڈاکیومنٹری فلم
اسے چلو چلو: دا لیونیسی آف فلم میکنگبھی کہتے ہیں
نیشنل فلم ایوارڈ فار بیسٹ ایکسپلوریشن/ایڈونچر فلم
[25]
[77]
منگل پانڈے: دا رائزنگ 2005 ہاں پس پردہ گلوکار منگل پانڈے نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[78]
رنگ دے بسنتی 2006 ہاں پس پردہ گلوکار دلجیت "ڈی جے" سنگھ/
چندرا شیکھر آزاد[IV]
فلم فیئر کریٹکس ایوارڈ فار بیسٹ ایکٹر
نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار
[50]
[79]
فنا 2006 ہاں ریحان قادری [80]
تارے زمیں پر 2007 ہاں ہاں ڈائیریکٹر/
پس پردہ گلوکار
رام شنکر نکومب نیشنل فلم ایوارڈ فار بیسٹ فلم آن فیملی ویلفیئر
فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین فلم
فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین ڈائیریکٹر
نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین معاون اداکار
[31]
[50]
[81]
[82]
جانے تو۔.۔ یا جانے نا 2008 ہاں نامزد— فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین فلم [83]
[84]
گجنی 2008 ہاں سنجے سنگھانیا نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [50]
[85]
لک بائی چانس 2009 ہاں بزات خود مختصر کردار [86]
تھری ایڈیٹس (فلم) 2009 ہاں رینچوداس "رینچو" شملداس چنچاد/
پنسکھ ونگدو[V]
نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [87]
[88]
پیپلی لائیو 2010 ہاں نامزد— فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین فلم [89]
[90]
دھوبی گھاٹ 2011 ہاں ہاں ارون [91]
بگ ان بالی وڈ 2011 ہاں بزات خود ڈاکیومنٹری فلم [92]
دہلی بیلی 2011 ہاں ہاں ڈسکو فائٹر گانے "آئی ہٹ یو (لائک آئی لو یو )میں خصوصی طور پر ظاہر ہوئے"
نامزد— فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین فلم
[93]
[94]
تلاش 2012 ہاں ہاں سورجان سنگھ شیخاوت [95]
بمبئی ٹاکیز 2013 ہاں بزات خود گانا "اپنا بمبئی ٹاکیز" میں خصوصی طور پر سامنے آئے [96]
رو برو 2013 ہاں بزات خود ڈاکیومنٹری فلم [97]
دھوم 3 2013 ہاں ساحر خان/ثمر خان[VI] [98]
پی کے 2014 ہاں پی کے نامزد—فلم فیئر ایوارڈ برائے بہترین اداکار [99]
[100]
دل دھڑکنے دو 2015 ہاں پلوٹو مہرا (آواز) [101]
دنگل Film has yet to be released 2016 ہاں مہاویر سنگھ پوغاٹ تیاری [102]

ٹیلی ویژن

عنوان سال کردار خالق(s) قسط(s) حوالہ۔
ستیامیو جیاتی 2012–14 میزبان بذات خود سیزن1، سیزن2اور سیزن3 [38]
سی آئی ڈی 2012 سرجان سنگ شیخاوت بی۔پی "رڈ سوئت کیس مرڈر" [39]

موسیقی ویڈیو میں

عنوان سال گلوکار(س) ڈائیریکٹر(س) البم حوالہ۔
"جب بھی چوم لیتا ہوں" 2003 روپ کمار راتھوڑ اشوک مہرا پیار کا جشن [24]

مزید دیکھیے

حواشی

^[I] The exchange rate in 1996 was 35.49 Indian rupees (INR) per 1 US dollar (US$)۔[103]
^[II] Khan played the younger version of Tariq Khan's character in the film.[46]
^[III] Khan played the younger version of Mahendra Sandhu's character in the film.[46]
^[IV] Khan played a character who portrays Chandrashekar Azad in a documentary featured in the film.[104]
^[V] Khan played a character who impersonates another man in the film.[105]
^[VI] Khan performed dual roles in the film.[106]

حوالاجات

  1. Dedhia، Sonal (14 مارچ 2012)۔ "The Most Ambitious Project of Aamir's Career"۔ Rediff.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 مارچ 2012۔ 
  2. ^ 2.0 2.1 Bamzai، Kaveree (7 جنوری 2010)۔ "Aamir Khan: Mr Blockbuster"۔ انڈیا ٹوڈے۔ اخذ کردہ بتاریخ 20 فروری 2014۔ 
  3. ^ 3.0 3.1 3.2 "Aamir Khan to return to direction"۔ دی ٹائمز آف انڈیا۔ 25 نومبر 2012۔ اخذ کردہ بتاریخ 20 فروری 2014۔ 
  4. Verma، Sukanya۔ "Aamir Khan's 25 finest movie moments"۔ Rediff.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2010۔ 
  5. Vijaykar، Rajeev (18 جون 2012)۔ "Qayamat Se Qayamat Tak: Turning-point"۔ بالی وڈ ہنگامہ۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2014۔ 
  6. "36th National Film Festival (1989)" (PDF)۔ Directorate of Film Festivals۔ صفحہ 72۔ اخذ کردہ بتاریخ 30 جولائی 2011۔ 
  7. ^ 7.0 7.1 "Hum Hain Rahi Pyar Ke (1993)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  8. Ganti، Tejaswini (2004)۔ Bollywood: A Guidebook to Popular Hindi Cinema۔ Psychology Press۔ صفحات 122–123۔ آئی ایس بی این 978-0-415-28854-5۔ 
  9. Mehta، Anita (12 مارچ 2010)۔ "The best of Aamir Khan"۔ Rediff.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2012۔ 
  10. "Top Lifetime Grossers Worldwide"۔ Box Office India۔ اصل سے جمع شدہ 26 جنوری 2014 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 9 جنوری 2008۔ 
  11. ^ 11.0 11.1 India Book of the Year۔ Encyclopaedia Britannica (India) Pvt. Ltd.۔ 2003۔ صفحہ 125۔ 
  12. Chaudhary، Alpana (3 جون 1998)۔ "Of Earth and a star"۔ Rediff.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2012۔ 
  13. "The song that made Khandala famous"۔ Hindustan Times۔ 25 جولائی 2012۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  14. "Box Office 1998"۔ Box Office India۔ اصل سے جمع شدہ 26 جنوری 2014 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 8 جنوری 2008۔ 
  15. "Box Office 1999"۔ Box Office India۔ اصل سے جمع شدہ 26 جنوری 2014 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 8 جنوری 2008۔ 
  16. Business India۔ A.H. Advani۔ 2001۔ صفحہ 154۔ 
  17. ^ 17.0 17.1 Punathambekar، Aswin (24 جولائی 2013)۔ From Bombay to Bollywood: The Making of a Global Media Industry۔ NYU Press۔ صفحہ 191۔ آئی ایس بی این 978-0-8147-2948-9۔ 
  18. ^ 18.0 18.1 Ebert، Roger (2004)۔ Roger Ebert's Movie Yearbook 2005۔ Andrews McMeel Publishing۔ صفحات 364–365۔ آئی ایس بی این 978-0-7407-4742-7۔ 
  19. ^ 19.0 19.1 "South takes the lion's share; Lagaan wins 8 national awards"۔ The Hindu۔ 27 جولائی 2002۔ اخذ کردہ بتاریخ 13 جنوری 2008۔ 
  20. "The Winners—2001"۔ Indiatimes.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  21. Daniels, Christina (2012)۔ I'll Do It My Way: The Incredible Journey of Aamir Khan۔ Om Books International۔ صفحات 117–118۔ آئی ایس بی این 978-93-80069-22-7۔ 
  22. Varia، Kush (25 دسمبر 2012)۔ Bollywood: Gods, Glamour, and Gossip۔ Wallflower۔ صفحات 26–27۔ آئی ایس بی این 978-1-906660-15-4۔ 
  23. Rangan, Baradwaj (25 جولائی 2011)۔ "The Ascendance of Aamir"۔ The Hindu۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2014۔ 
  24. ^ 24.0 24.1 Rana، Harini N. (16 جون 2003)۔ "Aamir's first music video"۔ Rediff.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 6 مارچ 2014۔ 
  25. ^ 25.0 25.1 "51st National Film Awards" (PDF)۔ Directorate of Film Festivals۔ صفحہ 110۔ اخذ کردہ بتاریخ مارچ 15, 2012۔ 
  26. Pillai, Sreedhar (29 جولائی 2005)۔ "Rising with a patriotic cry"۔ The Hindu۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2014۔ 
  27. "Box Office 2005"۔ Box Office India۔ اصل سے جمع شدہ 26 جنوری 2014 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 8 جنوری 2008۔ 
  28. "Box Office 2006"۔ Box Office India۔ اصل سے جمع شدہ 26 جنوری 2014 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 8 جنوری 2008۔ 
  29. Hindi Cinema Year Book۔ Screen World Publication۔ 2006۔ 
  30. Singh، Harneet (21 مئی 2007)۔ ""Yes, I have directed Taare Zameen Par" – Aamir Khan"۔ Bollywood Hungama۔ اصل سے جمع شدہ 28 جولائی 2010 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 11 اپریل 2008۔ 
  31. ^ 31.0 31.1 "55th National Film Awards for the Year 2007" (PDF)۔ Directorate of Film Festivals۔ صفحہ 3۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 اپریل 2014۔ 
  32. "Taare Zameen Par sweeps Filmfare Awards"۔ یاہو!۔ 24 فروری 2008۔ اصل سے جمع شدہ 29 جولائی 2010 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 29 جولائی 2010۔ 
  33. Jayan, T.V. (6 جولائی 2008)۔ "In the black hole of the mind"۔ The Telegraph۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 اپریل 2014۔ 
  34. Kazmi, Nikhat (12 جنوری 2009)۔ "Box Office: With Rs 200cr in kitty, 'Ghajini' rewrites records"۔ دی ٹائمز آف انڈیا۔ اخذ کردہ بتاریخ 12 جنوری 2009۔ 
  35. "Chennai Express Crosses Ek Tha Tiger Worldwide In Ten Days"۔ Box Office India۔ 19 اگست 2013۔ اصل سے جمع شدہ 28 جنوری 2014 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 21 ستمبر 2013۔ 
  36. "Dhobi Ghat to hit theatres in Germany"۔ Hindustan Times۔ 18 فروری 2011۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2014۔ 
  37. "Aamir Khan aims at Britain with two projects"۔ The Indian Express۔ 12 ستمبر 2010۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2014۔ 
  38. ^ 38.0 38.1 "Jittery when I signed up for TV: Aamir Khan"۔ Daily News and Analysis۔ 13 اپریل 2012۔ اخذ کردہ بتاریخ 2 اپریل 2014۔ 
  39. ^ 39.0 39.1 "Aamir Khan helps the CID team to solve a case"۔ دی ٹائمز آف انڈیا۔ 23 نومبر 2012۔ اخذ کردہ بتاریخ 20 فروری 2014۔ 
  40. "Dhoom 3 ALL TIME Number One Worldwide Grosser: 500 cr Plus Expected"۔ Box Office India۔ 1 جنوری 2014۔ اصل سے جمع شدہ 28 جنوری 2014 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 13 جنوری 2014۔ 
  41. "Satyamev Jayate: 41% of rape victims were in saris, 48% in burkha; are you aware of these facts?"۔ CNN-IBN۔ 2 مارچ 2014۔ اخذ کردہ بتاریخ 2 مارچ 2014۔ 
  42. Baksi، Dibyojyoti (1 اکتوبر 2014)۔ "Why Aamir Khan is missing from promos of Satyamev Jayate 3"۔ Hindustan Times۔ اخذ کردہ بتاریخ 5 اکتوبر 2014۔ 
  43. Chatterjee، Saibal (19 دسمبر 2014)۔ "PK Movie Review"۔ NDTV۔ اخذ کردہ بتاریخ 20 دسمبر 2014۔ 
  44. "PK Hits 700 Crore Worldwide – China At 14.5 Million"۔ Box Office India۔ 6 جون 2015۔ اخذ کردہ بتاریخ 6 جون 2015۔ 
  45. Hoad، Phil (7 جنوری 2015)۔ "Aamir Khan's religious satire PK becomes India's most successful film"۔ دی گارڈین۔ اخذ کردہ بتاریخ 8 جنوری 2015۔ 
  46. ^ 46.0 46.1 46.2 46.3 Verma، Sukanya (14 مارچ 2012)۔ "Birthday Special: The 47 Faces of Aamir Khan"۔ Rediff.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 20 فروری 2014۔ 
  47. ^ 47.0 47.1 Kapoor، Rajat (26 اپریل 2011)۔ "The Mentor and the student"۔ Man's World۔ اخذ کردہ بتاریخ 20 فروری 2014۔ 
  48. N، Patsy (3 جون 2009)۔ "Aamir never wanted to be an actor"۔ Rediff.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جنوری 2012۔ 
  49. "Qayamat Se Qayamat Tak (1988)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  50. ^ 50.00 50.01 50.02 50.03 50.04 50.05 50.06 50.07 50.08 50.09 50.10 50.11 50.12 50.13 50.14 50.15 "Aamir Khan: Awards & nominations"۔ Bollywood Hungama۔ اصل سے جمع شدہ 6 اگست 2010 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 23 جولائی 2010۔ 
  51. Patel، Bhaichand (2012)۔ Bollywood's Top 20: Superstars of Indian Cinema۔ Penguin Books India۔ صفحہ 219۔ آئی ایس بی این 978-0-670-08572-9۔ 
  52. "Raakh (1989)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  53. ^ 53.0 53.1 53.2 53.3 53.4 Chaudhuri, Diptakirti (2012)۔ Kitnay Aadmi Thay۔ Westland۔ صفحات 213–220۔ آئی ایس بی این 978-93-81626-19-1۔ 
  54. "Dil (1990)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  55. "The Nominations — 1990"۔ Indiatimes.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 9 مئی 2014۔ 
  56. "Afsana Pyaar Ka (1991)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  57. "Dil Hai Ke Manta Nahin (1991)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  58. "Isi Ka Naam Zindagi (1992)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  59. "Daulat Ki Jung (1992)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  60. "Jo Jeeta Wohi Sikandar (1992)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  61. "Pehla Nasha (1993)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  62. "Parampara (1993)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  63. "Damini (1993)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  64. "Andaz Apna Apna (1994)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  65. "The Nominations — 1994"۔ Indiatimes.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  66. "Baazi (1995)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  67. "Aatank Hi Aatank (1995)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  68. "Rangeela (1995)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  69. "Akele Hum Akele Tum (1995)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  70. "Ishq (1997)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  71. "Ghulam (1998)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  72. "ارتھ(1998)"۔ روٹن ٹماٹوز۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  73. "Sarfarosh (1999)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  74. "Mann (1999)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  75. "Mela (2000)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  76. "Dil Chahta Hai (2001)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  77. "Chale Chalo: The Lunacy of Film Making (2004)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  78. "Mangal Pandey – The Rising (2005)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  79. "Rang De Basanti (2006)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  80. "Fanaa (2006)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  81. "Taare Zameen Par (2007)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  82. "A first for Filmfare: Darsheel for Best Actor"۔ CNN-IBN۔ 6 فروری 2008۔ اخذ کردہ بتاریخ 2 مارچ 2014۔ 
  83. "Jaane Tu.۔. Ya Jaane Na (2008)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  84. "54th Idea Filmfare Awards 2008 nominations"۔ CNN-IBN۔ 18 فروری 2009۔ اخذ کردہ بتاریخ 2 مارچ 2014۔ 
  85. "Ghajini (2008)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  86. "Luck by Chance (2009)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  87. "3 Idiots (2009)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  88. "Nominations for 55th Idea Filmfare Awards 2009"۔ Bollywood Hungama۔ 11 فروری 2010۔ اخذ کردہ بتاریخ 2 مارچ 2014۔ 
  89. "Peepli [Live] (2010)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  90. "Nominations for 56th Idea Filmfare Awards 2010"۔ Bollywood Hungama۔ 14 جنوری 2011۔ اخذ کردہ بتاریخ 2 مارچ 2014۔ 
  91. "Dhobi Ghat (2011)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  92. Prabhakar، Jyothi (11 اگست 2012)۔ "I’d love to play a villain: Omi Vaidya"۔ دی ٹائمز آف انڈیا۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  93. "Delhi Belly (2011)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  94. "Nominations for 57th Idea Filmfare Awards 2011"۔ Bollywood Hungama۔ 11 جنوری 2012۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  95. "Talaash (2012)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  96. Shome-Ray، Aditi (26 اپریل 2013)۔ "Aamir Khan, Shah Rukh Khan and Madhuri Dixit come together for special song in 'Bombay Talkies'"۔ Daily News and Analysis۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  97. Baksi، Dibyojyoti (17 اپریل 2013)۔ "Documentary on the impact of Rang De Basanti"۔ Hindustan Times۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  98. "Dhoom 3 (2013)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  99. "P.K. (2014)"۔ Bollywood Hungama۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  100. "60th Britannia Filmfare Awards 2014: Complete nomination list"۔ دی ٹائمز آف انڈیا۔ 20 جنوری 2015۔ اخذ کردہ بتاریخ 20 جنوری 2015۔ 
  101. Guha، Kunal (5 جون 2015)۔ "Film Review: Dil Dhadakne Do"۔ Mumbai Mirror۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 جولائی 2015۔ 
  102. "Aamir Khan's day out with Dangal team and his on-screen daughters"۔ Deccan Chronicle۔ 24 فروری 2016۔ اخذ کردہ بتاریخ 7 مارچ 2016۔ 
  103. "Exchange Rate of the Indian Rupee Vis-a-Vis the SDR, US Dollar, Pound Sterling, D. M./Euro and Japanese Yen (Financial year — Annual average and end-year rates)" (PDF)۔ ریزرو بینک آف انڈیا۔ صفحہ 264۔ اصل سے جمع شدہ 24 نومبر 2013 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 17 اپریل 2014۔ 
  104. Varma، Mishty (12 جنوری 2007)۔ "A case for Rang De Basanti at the Oscars"۔ Hindustan Times۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 
  105. Sen، Meheli؛ Basu، Anustup (21 اکتوبر 2013)۔ Figurations in Indian Film۔ Palgrave Macmillan۔ صفحہ 99۔ آئی ایس بی این 978-1-137-34978-1۔ 
  106. "I like Samar's character more: Aamir Khan on his 'Dhoom 3' characters"۔ CNN-IBN۔ 3 جنوری 2014۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 اپریل 2014۔ 

بیرونی ربط

The article is a derivative under the Creative Commons Attribution-ShareAlike License. A link to the original article can be found here and attribution parties here. By using this site, you agree to the Terms of Use. Gpedia Ⓡ is a registered trademark of the Cyberajah Pty Ltd.